بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَٰنِ الرَّحِيمِ

إِنْ هُوَ إِلَّا وَحْيٌ يُوحَىٰ ﴿4﴾ عَلَّمَهُ شَدِيدُ الْقُوَىٰ ﴿5﴾ ذُو مِرَّةٍ فَاسْتَوَىٰ ﴿6﴾ وَهُوَ بِالْأُفُقِ الْأَعْلَىٰ ﴿7﴾ ثُمَّ دَنَا فَتَدَلَّىٰ ﴿8﴾ فَكَانَ قَابَ قَوْسَيْنِ أَوْ أَدْنَىٰ ﴿9﴾ فَأَوْحَىٰ إِلَىٰ عَبْدِهِ مَا أَوْحَىٰ ﴿10﴾ مَا كَذَبَ الْفُؤَادُ مَا رَأَىٰ ﴿11﴾ أَفَتُمَارُونَهُ عَلَىٰ مَا يَرَىٰ ﴿12﴾ وَلَقَدْ رَآهُ نَزْلَةً أُخْرَىٰ ﴿13﴾ عِنْدَ سِدْرَةِ الْمُنْتَهَىٰ ﴿14﴾ عِنْدَهَا جَنَّةُ الْمَأْوَىٰ ﴿15﴾ إِذْ يَغْشَى السِّدْرَةَ مَا يَغْشَىٰ ﴿16﴾ مَا زَاغَ الْبَصَرُ وَمَا طَغَىٰ ﴿17﴾ وَمَا يَنْطِقُ عَنِ الْهَوَىٰ ﴿3﴾ وَالنَّجْمِ إِذَا هَوَىٰ ﴿1﴾ مَا ضَلَّ صَاحِبُكُمْ وَمَا غَوَىٰ ﴿2﴾ لَقَدْ رَأَىٰ مِنْ آيَاتِ رَبِّهِ الْكُبْرَىٰ ﴿18﴾ أَفَرَأَيْتُمُ اللَّاتَ وَالْعُزَّىٰ ﴿19﴾ وَمَنَاةَ الثَّالِثَةَ الْأُخْرَىٰ ﴿20﴾ أَلَكُمُ الذَّكَرُ وَلَهُ الْأُنْثَىٰ ﴿21﴾ تِلْكَ إِذًا قِسْمَةٌ ضِيزَىٰ ﴿22﴾ إِنْ هِيَ إِلَّا أَسْمَاءٌ سَمَّيْتُمُوهَا أَنْتُمْ وَآبَاؤُكُمْ مَا أَنْزَلَ اللَّهُ بِهَا مِنْ سُلْطَانٍ ۚ إِنْ يَتَّبِعُونَ إِلَّا الظَّنَّ وَمَا تَهْوَى الْأَنْفُسُ ۖ وَلَقَدْ جَاءَهُمْ مِنْ رَبِّهِمُ الْهُدَىٰ ﴿23﴾ أَمْ لِلْإِنْسَانِ مَا تَمَنَّىٰ ﴿24﴾ فَلِلَّهِ الْآخِرَةُ وَالْأُولَىٰ ﴿25﴾ وَكَمْ مِنْ مَلَكٍ فِي السَّمَاوَاتِ لَا تُغْنِي شَفَاعَتُهُمْ شَيْئًا إِلَّا مِنْ بَعْدِ أَنْ يَأْذَنَ اللَّهُ لِمَنْ يَشَاءُ وَيَرْضَىٰ ﴿26﴾ إِنَّ الَّذِينَ لَا يُؤْمِنُونَ بِالْآخِرَةِ لَيُسَمُّونَ الْمَلَائِكَةَ تَسْمِيَةَ الْأُنْثَىٰ ﴿27﴾ وَمَا لَهُمْ بِهِ مِنْ عِلْمٍ ۖ إِنْ يَتَّبِعُونَ إِلَّا الظَّنَّ ۖ وَإِنَّ الظَّنَّ لَا يُغْنِي مِنَ الْحَقِّ شَيْئًا ﴿28﴾ فَأَعْرِضْ عَنْ مَنْ تَوَلَّىٰ عَنْ ذِكْرِنَا وَلَمْ يُرِدْ إِلَّا الْحَيَاةَ الدُّنْيَا ﴿29﴾ ذَٰلِكَ مَبْلَغُهُمْ مِنَ الْعِلْمِ ۚ إِنَّ رَبَّكَ هُوَ أَعْلَمُ بِمَنْ ضَلَّ عَنْ سَبِيلِهِ وَهُوَ أَعْلَمُ بِمَنِ اهْتَدَىٰ ﴿30﴾ وَلِلَّهِ مَا فِي السَّمَاوَاتِ وَمَا فِي الْأَرْضِ لِيَجْزِيَ الَّذِينَ أَسَاءُوا بِمَا عَمِلُوا وَيَجْزِيَ الَّذِينَ أَحْسَنُوا بِالْحُسْنَى ﴿31﴾ الَّذِينَ يَجْتَنِبُونَ كَبَائِرَ الْإِثْمِ وَالْفَوَاحِشَ إِلَّا اللَّمَمَ ۚ إِنَّ رَبَّكَ وَاسِعُ الْمَغْفِرَةِ ۚ هُوَ أَعْلَمُ بِكُمْ إِذْ أَنْشَأَكُمْ مِنَ الْأَرْضِ وَإِذْ أَنْتُمْ أَجِنَّةٌ فِي بُطُونِ أُمَّهَاتِكُمْ ۖ فَلَا تُزَكُّوا أَنْفُسَكُمْ ۖ هُوَ أَعْلَمُ بِمَنِ اتَّقَىٰ ﴿32﴾ أَفَرَأَيْتَ الَّذِي تَوَلَّىٰ ﴿33﴾ وَأَعْطَىٰ قَلِيلًا وَأَكْدَىٰ ﴿34﴾ أَعِنْدَهُ عِلْمُ الْغَيْبِ فَهُوَ يَرَىٰ ﴿35﴾ أَمْ لَمْ يُنَبَّأْ بِمَا فِي صُحُفِ مُوسَىٰ ﴿36﴾ وَإِبْرَاهِيمَ الَّذِي وَفَّىٰ ﴿37﴾ أَلَّا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِزْرَ أُخْرَىٰ ﴿38﴾ وَأَنْ لَيْسَ لِلْإِنْسَانِ إِلَّا مَا سَعَىٰ ﴿39﴾ وَأَنَّ سَعْيَهُ سَوْفَ يُرَىٰ ﴿40﴾ ثُمَّ يُجْزَاهُ الْجَزَاءَ الْأَوْفَىٰ ﴿41﴾ وَأَنَّ إِلَىٰ رَبِّكَ الْمُنْتَهَىٰ ﴿42﴾ وَأَنَّهُ هُوَ أَضْحَكَ وَأَبْكَىٰ ﴿43﴾ وَأَنَّهُ هُوَ أَمَاتَ وَأَحْيَا ﴿44﴾ وَأَنَّهُ خَلَقَ الزَّوْجَيْنِ الذَّكَرَ وَالْأُنْثَىٰ ﴿45﴾ مِنْ نُطْفَةٍ إِذَا تُمْنَىٰ ﴿46﴾ وَأَنَّ عَلَيْهِ النَّشْأَةَ الْأُخْرَىٰ ﴿47﴾ وَأَنَّهُ هُوَ أَغْنَىٰ وَأَقْنَىٰ ﴿48﴾ وَأَنَّهُ هُوَ رَبُّ الشِّعْرَىٰ ﴿49﴾ وَأَنَّهُ أَهْلَكَ عَادًا الْأُولَىٰ ﴿50﴾ وَثَمُودَ فَمَا أَبْقَىٰ ﴿51﴾ وَقَوْمَ نُوحٍ مِنْ قَبْلُ ۖ إِنَّهُمْ كَانُوا هُمْ أَظْلَمَ وَأَطْغَىٰ ﴿52﴾ وَالْمُؤْتَفِكَةَ أَهْوَىٰ ﴿53﴾ فَغَشَّاهَا مَا غَشَّىٰ ﴿54﴾ فَبِأَيِّ آلَاءِ رَبِّكَ تَتَمَارَىٰ ﴿55﴾ هَٰذَا نَذِيرٌ مِنَ النُّذُرِ الْأُولَىٰ ﴿56﴾ أَزِفَتِ الْآزِفَةُ ﴿57﴾ لَيْسَ لَهَا مِنْ دُونِ اللَّهِ كَاشِفَةٌ ﴿58﴾ أَفَمِنْ هَٰذَا الْحَدِيثِ تَعْجَبُونَ ﴿59﴾ وَتَضْحَكُونَ وَلَا تَبْكُونَ ﴿60﴾ وَأَنْتُمْ سَامِدُونَ ﴿61﴾ فَاسْجُدُوا لِلَّهِ وَاعْبُدُوا ۩ ﴿62﴾

عظیم اور دائمی رحمتوں والے خدا کے نام سے

اس کا کلام وہی وحی ہے جو مسلسل نازل ہوتی رہتی ہے ﴿4﴾ اسے نہایت طاقت والے نے تعلیم دی ہے ﴿5﴾ وہ صاحبِ حسن و جمال جو سیدھا کھڑا ہوا ﴿6﴾ جب کہ وہ بلند ترین افق پر تھا ﴿7﴾ پھر وہ قریب ہوا اور آگے بڑھا ﴿8﴾ یہاں تک کہ دو کمان یا اس سے کم کا فاصلہ رہ گیا ﴿9﴾ پھر خدا نے اپنے بندہ کی طرف جس راز کی بات چاہی وحی کر دی ﴿10﴾ دل نے اس بات کو جھٹلایا نہیں جس کو آنکھوں نے دیکھا ﴿11﴾ کیا تم اس سے اس بات کے بارے میں جھگڑا کر رہے ہو جو وہ دیکھ رہا ہے ﴿12﴾ اور اس نے تو اسے ایک بار اور بھی دیکھا ہے ﴿13﴾ سدرۃ المنتہیٰ کے نزدیک ﴿14﴾ جس کے پاس جنت الماویٰ بھی ہے ﴿15﴾ جب سدرہ پر چھا رہا تھا جو کچھ کہ چھا رہا تھا ﴿16﴾ اس وقت اس کی آنکھ نہ بہکی اور نہ حد سے آگے بڑھی ﴿17﴾ اور وہ اپنی خواہش سے کلام بھی نہیں کرتا ہے ﴿3﴾ قسم ہے ستارہ کی جب وہ ٹوٹا ﴿1﴾ تمہارا ساتھی نہ گمراہ ہوا ہے اور نہ بہکا ﴿2﴾ اس نے اپنے پروردگار کی بڑی بڑی نشانیاں دیکھی ہیں ﴿18﴾ کیا تم لوگوں نے لات اور عزی کو دیکھا ہے ﴿19﴾ اور منات جو ان کا تیسرا ہے اسے بھی دیکھا ہے ﴿20﴾ تو کیا تمہارے لئے لڑکے ہیں اور اس کے لئے لڑکیاں ہیں ﴿21﴾ یہ انتہائی نا انصافی کی تقسیم ہے ﴿22﴾ یہ سب وہ نام ہیں جو تم نے اور تمہارے باپ دادا نے طے کر لئے ہیں خدا نے ان کے بارے میں کوئی دلیل نازل نہیں کی ہے - درحقیقت یہ لوگ صرف اپنے گمانوں کا اتباع کر رہے ہیں اور جو کچھ ان کا دل چاہتا ہے اور یقیناً ان کے پروردگار کی طرف سے ان کے پاس ہدایت آ چکی ہے ﴿23﴾ کیا انسان کو وہ سب مل سکتا ہے جس کی آرزو کرے ﴿24﴾ بس اللہ ہی کے لئے دنیا اور آخرت سب کچھ ہے ﴿25﴾ اور آسمانوں میں کتنے ہی فرشتے ہیں جن کی سفارش کسی کے کام نہیں آ سکتی ہے جب تک خدا۔۔۔۔ جس کے بارے میں چاہے اور اسے پسند کرے۔۔۔۔ اجازت نہ دے دے ﴿26﴾ بیشک جو لوگ آخرت پر ایمان نہیں رکھتے ہیں وہ ملائکہ کے نام لڑکیوں جیسے رکھتے ہیں ﴿27﴾ حالانکہ ان کے پاس اس سلسلہ میں کوئی علم نہیں ہے یہ صرف وہم و گمان کے پیچھے چلے جا رہے ہیں اور گمان حق کے بارے میں کوئی فائدہ نہیں پہنچا سکتا ہے ﴿28﴾ لہذا جو شخص بھی ہمارے ذکر سے منہ پھیرے اور زندگانی دنیا کے علاوہ کچھ نہ چاہے آپ بھی اس سے کنارہ کش ہو جائیں ﴿29﴾ یہی ان کے علم کی انتہا ہے اور بیشک آپ کا پروردگار خوب جانتا ہے کہ کون اس کے راستہ سے بہک گیا ہے اور کون ہدایت کے راستہ پر ہے ﴿30﴾ اور اللہ ہی کے لئے زمین و آسمان کے کل اختیارات ہیں تاکہ وہ بد عمل افراد کو ان کے اعمال کی سزا دے سکے اور نیک عمل کرنے والوں کو ان کے اعمال کا اچھا بدلہ دے سکے ﴿31﴾ جو لوگ گناہانِ کبیرہ اور فحش باتوں سے پرہیز کرتے ہیں (گناہان صغیرہ کے علاوہ) بیشک آپ کا پروردگار ان کے لئے بہت وسیع مغفرت والا ہے وہ اس وقت بھی تم سب کے حالات سے خوب واقف تھا جب اس نے تمہیں خاک سے پیدا کیا تھا اور اس وقت بھی جب تم ماں کے شکم میں جنین کی منزل میں تھے لہذا اپنے نفس کو زیادہ پاکیزہ قرار نہ دو وہ متقی افراد کو خوب پہچانتا ہے ﴿32﴾ کیا آپ نے اسے بھی دیکھا ہے جس نے منہ پھیر لیا ﴿33﴾ اور تھوڑا سا راہِ خدا میں دے کر بند کر دیا ﴿34﴾ کیا اس کے پاس علم غیب ہے جس کے ذریعے وہ دیکھ رہا ہے ﴿35﴾ یا اسے اس بات کی خبر ہی نہیں ہے جو موسیٰ علیہ السّلام کے صحیفوں میں تھی ﴿36﴾ یا ابراہیم علیہ السّلام کے صحیفوں میں تھی جنہوں نے پورا پورا حق ادا کیا ہے ﴿37﴾ کوئی شخص بھی دوسرے کا بوجھ اٹھانے والا نہیں ہے ﴿38﴾ اور انسان کے لئے صرف اتنا ہی ہے جتنی اس نے کوشش کی ہے ﴿39﴾ اور اس کی کوشش عنقریب اس کے سامنے پیش کر دی جائے گی ﴿40﴾ اس کے بعد اسے پورا بدلہ دیا جائے گا ﴿41﴾ اور بیشک سب کی آخری منزل پروردگار کی بارگاہ ہے ﴿42﴾ اور یہ کہ اسی نے ہنسایا بھی ہے اور ----- رُلایا بھی ہے ﴿43﴾ اور وہی موت و حیات کا دینے والا ہے ﴿44﴾ اور اسی نے نر اور مادہ کا جوڑا پیدا کیا ہے ﴿45﴾ اس نطفہ سے جو رحم میں ڈالا جاتا ہے ﴿46﴾ اور اسی کے ذمہ دوسری زندگی بھی ہے ﴿47﴾ اور اسی نے مالدار بنایا ہے اور سرمایہ عطا کیا ہے ﴿48﴾ اور وہی ستارہ شعریٰ کا مالک ہے ﴿49﴾ اور اسی نے پہلے قوم عاد کو ہلاک کیا ہے ﴿50﴾ اور قوم ثمود کو بھی پھر کسی کو باقی نہیں چھوڑا ہے ﴿51﴾ اور قوم نوح کو ان سے پہلے۔کہ وہ لوگ بڑے ظالم اور سرکش تھے ﴿52﴾ اور اسی نے قوم لوط کی اُلٹی بستیوں کو پٹک دیا ہے ﴿53﴾ پھر ان کو ڈھانک لیا جس چیز نے کہ ڈھانک لیا ﴿54﴾ اب تم اپنے پروردگار کی کس نعمت پر شک کر رہے ہو ﴿55﴾ بیشک یہ پیغمبر بھی اگلے ڈرانے والوں میں سے ایک ڈرانے والا ہے ﴿56﴾ دیکھو قیامت قریب آ گئی ہے ﴿57﴾ اللہ کے علاوہ کوئی اس کا ٹالنے والا نہیں ہے ﴿58﴾ کیا تم اس بات سے تعجب کر رہے ہو ﴿59﴾ اور پھر ہنستے ہو اور روتے نہیں ہو ﴿60﴾ اور تم بالکل غافل ہو ﴿61﴾ (اب سے غنیمت ہے) کہ اللہ کے لئے سجدہ کرو اور اس کی عبادت کرو ﴿62﴾