بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَٰنِ الرَّحِيمِ

عَلِمَتْ نَفْسٌ مَا قَدَّمَتْ وَأَخَّرَتْ ﴿5﴾ يَا أَيُّهَا الْإِنْسَانُ مَا غَرَّكَ بِرَبِّكَ الْكَرِيمِ ﴿6﴾ الَّذِي خَلَقَكَ فَسَوَّاكَ فَعَدَلَكَ ﴿7﴾ فِي أَيِّ صُورَةٍ مَا شَاءَ رَكَّبَكَ ﴿8﴾ كَلَّا بَلْ تُكَذِّبُونَ بِالدِّينِ ﴿9﴾ وَإِنَّ عَلَيْكُمْ لَحَافِظِينَ ﴿10﴾ كِرَامًا كَاتِبِينَ ﴿11﴾ يَعْلَمُونَ مَا تَفْعَلُونَ ﴿12﴾ إِنَّ الْأَبْرَارَ لَفِي نَعِيمٍ ﴿13﴾ وَإِنَّ الْفُجَّارَ لَفِي جَحِيمٍ ﴿14﴾ يَصْلَوْنَهَا يَوْمَ الدِّينِ ﴿15﴾ وَمَا هُمْ عَنْهَا بِغَائِبِينَ ﴿16﴾ وَمَا أَدْرَاكَ مَا يَوْمُ الدِّينِ ﴿17﴾ وَإِذَا الْبِحَارُ فُجِّرَتْ ﴿3﴾ وَإِذَا الْقُبُورُ بُعْثِرَتْ ﴿4﴾ إِذَا السَّمَاءُ انْفَطَرَتْ ﴿1﴾ وَإِذَا الْكَوَاكِبُ انْتَثَرَتْ ﴿2﴾ ثُمَّ مَا أَدْرَاكَ مَا يَوْمُ الدِّينِ ﴿18﴾ يَوْمَ لَا تَمْلِكُ نَفْسٌ لِنَفْسٍ شَيْئًا ۖ وَالْأَمْرُ يَوْمَئِذٍ لِلَّهِ ﴿19﴾

عظیم اور دائمی رحمتوں والے خدا کے نام سے

تب ہر نفس کو معلوم ہو گا کہ کیا مقدم کیا ہے اور کیا موخر کیا ہے ﴿5﴾ اے انسان تجھے رب کریم کے بارے میں کس شے نے دھوکہ میں رکھا ہے ﴿6﴾ اس نے تجھے پیدا کیا ہے اور پھر برابر کر کے متوازن بنایا ہے ﴿7﴾ اس نے جس صورت میں چاہا ہے تیرے اجزاء کی ترکیب کی ہے ﴿8﴾ مگر تم لوگ جزا کا انکار کرتے ہو ﴿9﴾ اور یقیناً تمہارے سروں پر نگہبان مقرر ہیں ﴿10﴾ جو با عزت لکھنے والے ہیں ﴿11﴾ وہ تمہارے اعمال کو خوب جانتے ہیں ﴿12﴾ بے شک نیک لوگ نعمتوں میں ہوں گے ﴿13﴾ اور بدکار افراد جہنمّ میں ہوں گے ﴿14﴾ وہ روز جزا اسی میں جھونک دیئے جائیں گے ﴿15﴾ اور وہ اس سے بچ کر نہ جا سکیں گے ﴿16﴾ اور تم کیا جانو کہ جزا کا دن کیا شے ہے ﴿17﴾ اور جب دریا بہہ کر ایک دوسرے سے مل جائیں گے ﴿3﴾ اور جب قبروں کو اُبھار دیا جائے گا ﴿4﴾ جب آسمان شگافتہ ہو جائے گا ﴿1﴾ اور جب ستارے بکھر جائیں گے ﴿2﴾ پھر تمہیں کیا معلوم کہ جزا کا دن کیسا ہوتا ہے ﴿18﴾ اس دن کوئی کسی کے بارے میں کوئی اختیار نہ رکھتا ہو گا اور سارا اختیار اللہ کے ہاتھوں میں ہو گا ﴿19﴾