بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَٰنِ الرَّحِيمِ

وَيْلٌ لِلْمُطَفِّفِينَ ﴿1﴾ الَّذِينَ إِذَا اكْتَالُوا عَلَى النَّاسِ يَسْتَوْفُونَ ﴿2﴾ وَإِذَا كَالُوهُمْ أَوْ وَزَنُوهُمْ يُخْسِرُونَ ﴿3﴾ أَلَا يَظُنُّ أُولَٰئِكَ أَنَّهُمْ مَبْعُوثُونَ ﴿4﴾ لِيَوْمٍ عَظِيمٍ ﴿5﴾ يَوْمَ يَقُومُ النَّاسُ لِرَبِّ الْعَالَمِينَ ﴿6﴾ كَلَّا إِنَّ كِتَابَ الْفُجَّارِ لَفِي سِجِّينٍ ﴿7﴾ وَمَا أَدْرَاكَ مَا سِجِّينٌ ﴿8﴾ كِتَابٌ مَرْقُومٌ ﴿9﴾ وَيْلٌ يَوْمَئِذٍ لِلْمُكَذِّبِينَ ﴿10﴾ الَّذِينَ يُكَذِّبُونَ بِيَوْمِ الدِّينِ ﴿11﴾ وَمَا يُكَذِّبُ بِهِ إِلَّا كُلُّ مُعْتَدٍ أَثِيمٍ ﴿12﴾ إِذَا تُتْلَىٰ عَلَيْهِ آيَاتُنَا قَالَ أَسَاطِيرُ الْأَوَّلِينَ ﴿13﴾ كَلَّا ۖ بَلْ ۜ رَانَ عَلَىٰ قُلُوبِهِمْ مَا كَانُوا يَكْسِبُونَ ﴿14﴾ كَلَّا إِنَّهُمْ عَنْ رَبِّهِمْ يَوْمَئِذٍ لَمَحْجُوبُونَ ﴿15﴾ ثُمَّ إِنَّهُمْ لَصَالُو الْجَحِيمِ ﴿16﴾ ثُمَّ يُقَالُ هَٰذَا الَّذِي كُنْتُمْ بِهِ تُكَذِّبُونَ ﴿17﴾ كَلَّا إِنَّ كِتَابَ الْأَبْرَارِ لَفِي عِلِّيِّينَ ﴿18﴾ وَمَا أَدْرَاكَ مَا عِلِّيُّونَ ﴿19﴾ كِتَابٌ مَرْقُومٌ ﴿20﴾ يَشْهَدُهُ الْمُقَرَّبُونَ ﴿21﴾ إِنَّ الْأَبْرَارَ لَفِي نَعِيمٍ ﴿22﴾ عَلَى الْأَرَائِكِ يَنْظُرُونَ ﴿23﴾ تَعْرِفُ فِي وُجُوهِهِمْ نَضْرَةَ النَّعِيمِ ﴿24﴾ يُسْقَوْنَ مِنْ رَحِيقٍ مَخْتُومٍ ﴿25﴾ خِتَامُهُ مِسْكٌ ۚ وَفِي ذَٰلِكَ فَلْيَتَنَافَسِ الْمُتَنَافِسُونَ ﴿26﴾ وَمِزَاجُهُ مِنْ تَسْنِيمٍ ﴿27﴾ عَيْنًا يَشْرَبُ بِهَا الْمُقَرَّبُونَ ﴿28﴾ إِنَّ الَّذِينَ أَجْرَمُوا كَانُوا مِنَ الَّذِينَ آمَنُوا يَضْحَكُونَ ﴿29﴾ وَإِذَا مَرُّوا بِهِمْ يَتَغَامَزُونَ ﴿30﴾ وَإِذَا انْقَلَبُوا إِلَىٰ أَهْلِهِمُ انْقَلَبُوا فَكِهِينَ ﴿31﴾ وَإِذَا رَأَوْهُمْ قَالُوا إِنَّ هَٰؤُلَاءِ لَضَالُّونَ ﴿32﴾ وَمَا أُرْسِلُوا عَلَيْهِمْ حَافِظِينَ ﴿33﴾ فَالْيَوْمَ الَّذِينَ آمَنُوا مِنَ الْكُفَّارِ يَضْحَكُونَ ﴿34﴾ عَلَى الْأَرَائِكِ يَنْظُرُونَ ﴿35﴾ هَلْ ثُوِّبَ الْكُفَّارُ مَا كَانُوا يَفْعَلُونَ ﴿36﴾

عظیم اور دائمی رحمتوں والے خدا کے نام سے

ویل ہے ان کے لئے جو ناپ تول میں کمی کرنے والے ہیں ﴿1﴾ یہ جب لوگوں سے ناپ کر لیتے ہیں تو پورا مال لے لیتے ہیں ﴿2﴾ اور جب ان کے لئے ناپتے یا تولتے ہیں تو کم کر دیتے ہیں ﴿3﴾ کیا انہیں یہ خیال نہیں ہے کہ یہ ایک روز دوبارہ اٹھائے جانے والے ہیں ﴿4﴾ بڑے سخت دن میں ﴿5﴾ جس دن سب رب العالمین کی بارگاہ میں حاضر ہوں گے ﴿6﴾ یاد رکھو کہ بدکاروں کا نامہ اعمال سجین میں ہو گا ﴿7﴾ اور تم کیا جو کہ سجین کیا ہے ﴿8﴾ ایک لکھا ہوا دفتر ہے ﴿9﴾ آج کے دن ان جھٹلانے والوں کے لئے بربادی ہے ﴿10﴾ جو لوگ روز جزا کا انکار کرتے ہیں ﴿11﴾ اور اس کا انکار صرف وہی کرتے ہیں جو حد سے گزر جانے والے گنہگار ہیں ﴿12﴾ جب ان کے سامنے آیات کی تلاوت کی جاتی ہے تو کہتے ہیں کہ یہ تو پرانے افسانے ہیں ﴿13﴾ نہیں نہیں بلکہ ان کے دلوں پر ان کے اعمال کا زنگ لگ گیا ہے ﴿14﴾ یاد رکھو انہیں روز قیامت پروردگار کی رحمت سے محجوب کر دیا جائے گا ﴿15﴾ پھر اس کے بعد یہ جہنمّ میں جھونکے جانے والے ہیں ﴿16﴾ پھر ان سے کہا جائے گا کہ یہی وہ ہے جس کا تم انکار رہے تھے ﴿17﴾ یاد رکھو کہ نیک کردار افراد کا نامہ اعمال علیین میں ہو گا ﴿18﴾ اور تم کیا جانو کہ علیین کیا ہے ﴿19﴾ ایک لکھا ہوا دفتر ہے ﴿20﴾ جس کے گواہ ملائکہ مقربین ہیں ﴿21﴾ بے شک نیک لوگ نعمتوں میں ہوں گے ﴿22﴾ تختوں پر بیٹھے ہوئے نظارے کر رہے ہوں گے ﴿23﴾ تم ان کے چہروں پر نعمت کی شادابی کا مشاہدہ کرو گے ﴿24﴾ انہیں سر بمہر خالص شراب سے سیراب کیا جائے گا ﴿25﴾ جس کی مہر مشک کی ہو گی اور ایسی چیزوں میں شوق کرنے والوں کو آپس میں سبقت اور رغبت کرنی چاہئے ﴿26﴾ اس شراب میں تسنیم کے پانی کی آمیزش ہو گی ﴿27﴾ یہ ایک چشمہ ہے جس سے مقرب بارگاہ بندے پانی پیتے ہیں ﴿28﴾ بے شک یہ مجرمین صاحبانِ ایمان کا مذاق اُڑایا کرتے تھے ﴿29﴾ اور جب وہ ان کے پاس سے گزرتے تھے تو اشارے کنائے کرتے تھے ﴿30﴾ اور جب اپنے اہل کی طرف پلٹ کر آتے تھے تو خوش و خرم ہوتے تھے ﴿31﴾ اور جب مومنین کو دیکھتے تو کہتے تھے کہ یہ سب اصلی گمراہ ہیں ﴿32﴾ حالانکہ انہیں ان کا نگراں بنا کر نہیں بھیجا گیا تھا ﴿33﴾ تو آج ایمان لانے والے بھی کفاّر کا مضحکہ اُڑائیں گے ﴿34﴾ تختوں پر بیٹھے ہوئے دیکھ رہے ہوں گے ﴿35﴾ اب تو کفار کو ان کے اعمال کا پورا پورا بدلہ مل رہا ہے ﴿36﴾